قطر نے تاریخی اعلان کردیا، اب غیر ملکیوں کو کفیل کی ضرورت نہ رہے گی اور مقامی شہریوں جتنی ہی سہولیات ملیں گی لیکن صرف ایک شرط پر کہ۔۔۔

دوحہ(مانیٹرنگ ڈیسک) عرب ممالک میں کام کرنے والے غیر ملکیوں کے لئے کفیل کی لازمی شرط اور مستقل اقامت سے محرومی دو اہم ترین مسائل ہیں، لیکن قطر وہ پہلا عرب ملک بن گیا ہے جس نے غیر ملکیوں کے یہ دونوں مسائل حل کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔

بلوم برگ کی رپورٹ کے مطابق قطر میں ایک نئے قانون کی منظوری کے بعد خلیجی خطے میں یہ پہلا ملک ہوگا جہاں غیر ملکیوں کو بھی اس کے اپنے شہریوں جیسا مقام اور سہولیات حاصل ہوسکیں گی۔ اس قانون کے تحت مستقل اقامت حاصل کرنے والے غیرملکیوں کو قطری شہریوں کی طرح ہی حکومتی ویلفیئر سسٹم سے مستفید ہونے کا موقع مل سکے گا، یعنی وہ تعلیم، صحت اور دیگر سرکاری سہولیات سے قطری شہریوں کی طرح ہی استفادہ کرسکیں گے۔ قطرکے اپنے شہریوں کے بعد مستقل اقامت رکھنے والے غیرملکیوں کو فوج اور دیگر سرکاری و غیر سرکاری شعبوں میں ملازمتوں کیلئے بھی ترجیح دی جائے گی جبکہ وہ جائیداد خریدنے اور اپنا کاروبار قائم کرنے کا حق بھی حاصل کر سکیں گے۔

قطر کی مستقل اقامت کیلئے وہ بچے اہل ہوں گے جو قطری خواتین کی غیر ملکی مردوں سے شادیوں کے نتیجے میں پیدا ہوئے ہیں۔ اسی طرح غیر معمولی صلاحیتیں رکھنے والے غیر ملکی شہری بھی مستقل اقامت کے اہل ہوں گے، جبکہ قطر کیلئے قابل ذکر خدمات سرانجام دینے والے غیرملکیوں کو بھی مستقل اقامت دی جاسکے گی۔ اگرچہ مستقل اقامت حاصل کرنے والے غیر ملکی قطر کے شہری تصور نہیں ہوں گے تاہم انہیں قطری شہریوں جیسی سہولیات ضرور دستیاب ہوں گی۔