سپریم کورٹ نے وزیراعظم کے خلاف شیخ رشید کی درخواست مسترد کردی

سپریم کورٹ آف پاکستان نے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی نااہلی کے لیے عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید کی درخواست مسترد کردی۔
سپریم کورٹ میں وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کے خلاف شیخ رشید کی درخواست پر سماعت ہوئی۔ سماعت کے دوران چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے کہ ہم نہیں سمجھتےکہ ایل این جی کامعاملہ 184 (3) کے ضمن میں آتا ہے۔
چیف جستس نے مزید کہا کہا کہ اگر ایل این جی کی خرید وفروخت سے متعلق شکایت ہے تو نیب کے پاس جائیں۔ جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ قومی مفاد کو دیکھنے کے لیے ادارے قائم کیے گئے ہیں، ہمیں یقین ہے کہ نیب ایک آزاد ادارہ ہے۔
اس موقع پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ نیب چاہے تو متعلقہ افراد کو طلب بھی کرسکتا ہے۔ چیف جسٹس نے شیخ رشید کے وکیل سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ آپ نیب کے پاس جائیں۔
شیخ رشید کے وکیل لطیف کھوسہ نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ عدالتی احکامات کی سنگین خلاف ورزیاں ہورہی ہیں اور حکومت اختیارات کا غلط استعمال کر رہی ہے۔
چیف جسٹس سپریم کورٹ نے کہا کہ پہلے کیس کےحقائق سے آگاہ کریں۔ لطیف کھوسہ نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں قدرتی گیس کے وسیع ذخائر ہیں۔
اس دوران بجلی کڑکنے پر لطیف کھوسہ خاموش ہو گئے اور کہا کہ ایل این جی جیسےکرتوتوں کی وجہ سے بجلی کڑک رہی ہے۔ جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ بارش اللہ کی رحمت ہے،آپ دلائل جاری رکھیں، جو گرجتے ہیں وہ برستے نہیں۔