ہم دوست سمجھتے رہے مگر چین نے کیا کام کر ڈالا ۔۔ چین نے پاکستان کی پیٹھ میں خنجر گھونپ دیا ۔۔ پاکستانی غم و غصےکی تصویر بن گئے

اسلام آباد (ویب ڈیسک) بات بڑھ گئی، پاکستان کی پیش کردہ تجاویز مسترد ،ہم یہ کام ہرگز نہیں کریں گے،چین نے دوٹوک انکارکردیا،چین نے پاکستان کی جانب سے پیش کردہ کئی تجاویز کو مسترد کرتے ہوئے پاکستان اور چین کے درمیان ہونے والے فری ٹریڈ معاہدے میں پاکستان کے حق میں ترامیم کرنے سے انکار کر دیا ہے کہ دونوں ملکوں کے درمیان آزاد تجارتی معاہدے میں شرائط و ضوابط کو تبدیل کرنے کے لئے اس وقت چین تیار نہیں ہےان تبدیلوں کا مقصد یہ تھا کہ پاکستان کے لئے اس باہمی تجارتی معاہدے میں پاکستان کے تاجروں کے لئے مزید مراعات حاصل کی جا سکیں،تجارت اور ٹیکسٹائل وزارت کے مطابق، پاک چین تجارت حجم، جو سال2006-07 میں تقریبا 4 ارب امریکی ڈالر تھا، 2017-18 میں 15.6 ارب امریکی ڈالر ہو گیا ہے. اس دو طرفہ تجارت میں، چین کو پاکستان کی برآمدات 2006-07میں امریکی ڈالر 75 کروڑ سے بڑھ کر امریکی ڈالر 2016-17 میں 14.13 بلین امریکی ڈالر ہو گئیں.

اعدادو شمار سے پتہ چلتا ہے کہ چین کی مصنوعات نے تمام شعبوں میں پاکستان کے تمام مقامی بازپر قبضہ کر لیا ہے اور اس تجارت میں اہم فائدہ چینی مینوفیکچررز کو ہو رہا ہے. پاکستان کی معیشت بھی چینی مصنوعات کو پاکستان کے اندر پھیلانے کے باعث مصیبت میں آئی ہے اور مقامی مینوفیکچررز نے اپنی صنعتوں کو بند کر دیا ہے اس میں مارکیٹ میں چین کی مصنوعات کے ساتھ غیر مسابقتی ہو گئی ہے. بعض مقامی معروف مقامی مینوفیکچررز کی مداخلت پر، حکومت کو چین اور وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی بے فوری طور پر چین کے ساتھ بات چیت کا سلسلہ شروع کیا تاکہ اس تجارتی معاہدے میں مناسب تبدیلیاں کرکے پاکستان کو فائدہ دیا جا سکے ، لیکن پاکستانی تاجروں کے پر زوراسرار پر اس ایف ٹی اے کے دوسرے مرحلے پر دستخط کرنے میں تاخیر کی گئی ہے، اس سلسلے میں پاکستان کے کاروباری برادری کی طرف سے دکھایا جانے والی تشویش کی وجہ سے اس معاہدے کے دوسرے فیز پر اتفاق رائے نہ ہونے کی وجہ سے اس پر دستخط نہیں ہو سکےْ.چین کے ساتھ ایف ٹی اے کے مسئلے پر بات چیت کرتے ہوئے قومی اسمبلی کی کمیٹی برائے فنانس کے اراکین نے چین کے ساتھ ایف ٹی اے پر اس مرحلے پر دستخط کرنے سے پہلے تمام شراکت داروں کے ساتھ مزید مذاکرات اور مشورے پر زور دیا تاکہ پاکستان کی مقامی مارکیٹ میں چین کی مصنوعات کی ڈمپنگ کی وجہ سے مقامی صنعت کوزیادہ نقصان نہ پہنچ سکے. انہوں نے حکومت سے بھی کہا کہ کمیٹی کے ارکان کے ساتھ دوسرے مرحلے پر چین کے ساتھ معاہدے کو حتمی شکل دینے سے قبل کمیٹی کے ارکان کو اعتماد میں لیا جائے.تاکہ اس کو جامع دستاویز بنایا جا سکے.تجارت پر پاکستان اور چین کے درمیان آزاد تجارتی معاہدے پر 24 نومبر، 2006 کو دستخط کئے گئے . اور یہ معاہدہ یکم جولائی، 2007 کو نافذ کیا گیا تھا. ایف ٹی اے کے تحت تقریبا 7000 ٹیرف لائنز کا احاطہ کیا ہے اور اس مرحلے پر عمل درآمد کے پہلے تین سالوں میں دونوں اطراف نے تقریبا 36 فی صد ٹیرف لائنوں پر ٹیریف کو صفر فیصد ڈیوٹی پر کیا گیا.اس کے دوسرے مرحلے کو 2013 میں شروع کیا جانا تھا لیکن ابھی تک اس پر اتفاق رائے نہ ہونے کی وجہ سے اس کے دوسرے مرحلے پر عمل درآمد شروع نہیں کیاجا سکا.تجارت میں توازن برقرار رکھنے کے لئے چین نے 2011 میں ایف ٹی اے کے دوسرے مرحلے پر مذاکرات شروع کردیئیتھے اور اب تک اس سلسلے میں دس اجلاس منعقد ہو چکے ہیں. ابتدائی اجلاسوں میں، پاکستان نے چین کو بتایا کہ ایف ٹی اے کے تحت پاکستان دی جانے والی ترجیحات میں پاکستان کو زیادہ فائدہ نہیں ہو رہا. مقامی صنعتوں کو نقصان پہنچ رہا ہے.چین . پاکستان کے فری ٹریڈ معاہدے کے دوسرے مرحلے کے موقع پر پاکستان اور چین کے درمیان کئی ادوار ہوئے جن میں سیکریٹری آف کامرس ، جبکہ چین کی طرف سے چین کی وزارت تجارت کے نائب وزیر نے چین کی نمائندگی کی.پاکستان کی طرف سے صنعت اور حکومتی شراکت داروں کے ساتھ وسیع مشورے ہوئے ہیں، اور وہ اس ایف ٹی اے میں 90 فی صد کی لبرلائزیشن کی سطح پر اتفاق کیا گیا تھا، ٹیرف لائنز اور تجارتی قیمت کے لحاظ سے اور مذاکرات کے دوران، یہ 75 فی صد ٹیرف لائنز کی جانی تھیں لیکن چین کی طرف سے اس کو نہ ماننے کی وجہ سے اس پر مذید مذاکرات التوا ء کا شکار ہو گئے ہیں. اس فری ٹریڈ معاہدے کے دعسرے مرحلے کے سلسلے میں دسواں اور تازہ ترین دور اپریل کے پہلے ہفتے میں ہوا .

جس میں وانگ شوؤن، نائب وزیر برائے تجارت چین، اور سیکریٹری کامرس پاکستان محمد یونس ڈہاگہ نے شرکت کی.لیکن اندرونی رپورٹس کے مطابق، دونوں اطراف سے بہت سے مسائل پر اتفاق رائے کے باوجود دونوں فریق حتمی معاہدے تک پہنچنے میں ناکام رہے اور یہ فیصلہ کیا گیا کہ مزیدا دوار کاروباری برادری کی طرف سے پیش کئے جانے والے خدشات کو دور کرنے کے بعد کئے جائیں گے. جب سے دونوں ممالک نے ایف ٹی اے پر دستخط کیے ہیں اس وقت سے تجارتی توازن چین کی طرف بڑھ رہی ہے. کاروباری برادری نے حکومت کو بتایا کہ اس مرحلے میں ایف ٹی اے میں چین کو رعایت کی وجہ سے، چین سے پاکستان کی درآمد ہر سال بڑھ رہی ہے، جبکہ چین کو پاکستان کی برآمدات اس سلسلے میں مثبت نتائج نہیں دکھا رہیں ،پاکستان اور چین کے درمیان یہ تجارتی عدم توازن پاکستان کے درآمدی بل میں اضافہ اور دونوں ممالک کے درمیان درآمد اور برآمد کے درمیان فرق بڑھانے کی بڑی وجہ ہے.