نگراں حکومت سے متعلق خورشید شاہ اور شاہ محمود کی ملاقات

وزیراعظم سے ملاقات کے بعد اپوزیشن لیڈر نے پی ٹی آئی رہنما شاہ محمود قریشی سے ملاقات کی ہے، ملاقات میں نگراں وزیراعظم کے نام سے متعلق تبادلہ خیال کیا گیا ہے۔
ذرائع کے مطابق آج نگران وزیر اعظم کی نامزدگی کیلئے حکومت و اپوزیشن میں باضابطہ مشاورت کا آغاز ہوا تھا، اسی سلسلے میں وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور اپوزیشن لیڈر سے ملاقات کی ہے۔
وزیراعظم سے ملاقات کے بعد اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ اسلام آباد میں موجود پی ٹی آئی کے وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی سے ملے اور نگران وزیراعظم سے متعلق ان سے گفتگو کی۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ خورشید شاہ نے وزیراعظم سے ملاقات میں کہا آپ کےکوئی نام تو بتائیں،جس پر شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ابھی حکومتی اتحادیوں سے نام نہیں لئے گئے ،جس پر میں نے بھی وزیراعظم کو بتایا کہ مجھے بھی اپوزیشن اتحاد کی جانب سے نام کا انتظار ہے ،کوشش ہے 15 مئی سے پہلے نگراں وزیراعظم کا نام فائنل کرلیں گے۔بعد ازاں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے خورشید شاہ نے کہا کہ ہم نے وزیراعظم سے مطالبہ کیا ہے کہ آئندہ بجٹ صرف چار ماہ کیلئے پیش کیا جائے، کیونکہ چھٹا بجٹ پیش کرنے کا اختیار حکومت کے پاس نہیں ہے۔
تحریک انصاف کے رہنما شاہ محمود قریشی نے خورشید شاہ کے موقف کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کا پورے سال کے بجٹ کا جوازنہیں بنتا ،نئی آنے والی حکومت کو بجٹ دینا چاہئے،ان کا کہنا تھا کہ نگران وزیراعظم پر اتفاق کرکے نام اپوزیشن لیڈر کو دینگے ۔
اس سے قبل نگران وزیر اعظم کی نامزدگی کیلئے حکومت واپوزیشن میں باضابطہ مشاورت کا آغاز ہوا ہے ، اسی سلسلے میں وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور اپوزیشن لیڈر سے ملاقات کی۔
نگراں وزیراعظم کے نام پر مشاورت کے لئے یہ تیسری بیٹھک تھی اس سے قبل ہونے والی دونوں ملاقاتیں بے نتیجہ رہی تھی۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم سے ملاقات کے بعد اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ آصف زرداری اوربلاول بھٹو کو مشاورت سے آگاہ کریں گے یاد رہے کہ آئندہ ماہ اکتیس مئی کو موجودہ حکومت کی پانچ سالہ مدت ختم ہونے جارہی ہے، جس کے بعد ایک عبوری حکومت تشکیل دی جائے گی جو جولائی یا اگست کے پہلے ہفتے میں ہونے والے عام انتخابات کے حوالے سے انتظامات دیکھے گی۔