(ن) لیگ گھٹنوں کے بل آ گری: صوبہ پنجاب کی شان سمجھے جانے والے سیاستدان اور نواز شریف کے سب سے بڑے اتحادی نے تحریک انصاف میں شمولیت کا فیصلہ کر لیا

اسلام آباد (ویب ڈیسک) مسلم لیگ (ضیاء) کے سربراہ اور ن لیگ کے اتحادی اعجاز الحق نے جنوبی پنجاب محاذ میں شامل ہونے کا فیصلہ کرلیا جبکہ رحیم یار خان سے جاوید وڑائچ اور دوست محمد کھوسہ پی ٹی آئی میں شامل ہوں گے

میڈیا رپورٹس کے مطابق بہاولپور سے ایم این اے اعجاز الحق نے جنوبی پنجاب محاذ میں شمولیت کا فیصلہ کرلیا ہے۔ذرائع نے بتایا کہ رحیم یار خان سے پیپلزپارٹی کے رہنماءجاوید وڑائچ اور سابق وزیر اعلیٰ پنجاب دوست کھوسہ نے تحریک انصاف میں جانے کا فیصلہ کرلیا ہے۔جو جنوبی پنجاب کی سیاست میں ایک بڑی پیشرفت ہے۔جبکہ دوسری جانب مسلم لیگ (ن) کے منحرف رہنما خسرو بختیار نے کہا ہے کہ ہم نے کسی پارٹی کی مخالفت میں پلیٹ فارم نہیں بنایا، اب وہ وقت آگیا ہے کہ ہم ایک نکاتی ایجنڈے پر اکھٹے ہو کر آگے بڑھیں، چند ہفتوں میں بڑے بڑے نام بھی اس ایجنڈے پر ہمارا ساتھ دیں گے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے اے آر وائی نیوز کے پروگرام ’آف دی ریکارڈ‘ میں انٹرویو دیتے ہوئے کیا، خسرو بختیار کا کہنا تھا کہ لوگوں کے مسائل حل کرنے کی ذمہ داری صوبائی حکومت ہے، جنوبی پنجاب میں ہر دوسرا شخص غربت کا شکار اور تعلیم سے محروم ہے۔انہوں نے کہا کہ جنوبی پنجاب میں غربت کی شرح 51 فیصد ہے، پارٹی میں رہتے ہوئے ہم مطالبات کرتے رہے کہ مسائل کو حل کیا جائے ،

لیکن کوئی عمل نہیں ہوا، ن لیگ بہاولپور قرارداد کو جنوبی پنجاب سے الجھا کر رکھ دیا، جنوبی پنجاب سے لوگ گورنر، وزیراعظم اور اسپیکر بھی رہے ہیں۔خسرو بختیار کا کہنا تھا کہ جنوبی پنجاب کا صوبہ نہ بننا یہ ہم سب کی نا کامی ہے، آج بھی شہباز شریف کے پاس جنوبی پنجاب کے لوگ گئے تھے، جو لوگ شہباز شریف کے پاس گئے وہ ہم سے بھی رابطے میں ہیں، پیپلزپارٹی نے بھی 2010 میں جنوبی پنجاب کا نعرہ لگایا تھا۔ان کا مزید کہنا تھا کہ میاں صاحب کی حالیہ سیاست غلط سمت میں جا رہی ہے، 18 ویں ترمیم کے بعد بھی ملک میں نظریہ ضرورت پر زور دیا جا رہا ہے، ن لیگ کا اب نظریاتی ووٹ بینک نہیں رہا ہے۔ واضح رہے کہ پیر کو مسلم لیگ (ن) کے 8 ممبران قومی اسمبلی و صوبائی اسمبلی نے اسمبلی رکنیت سے استعفے دے کر جنوبی پنجاب محاذ میں شمولیت اختیار کر لی تھی اور حالیہ پیشرفت بھی اس سلسلہ کی کڑی ہے ذرائع نے بتایا کہ مزید جنوبی پنجاب سے متعدد سیاسی رہنماءجنوبی پنجاب میں محاز میں جانے کیلئے پر تول رہے ہیں۔