”نواز شریف کی تاحیات نااہلی ختم ہو سکتی ہے اگر۔۔۔“ عدالت نے تہلکہ خیز فیصلہ سنانے کے بعد نواز شریف کیلئے ’خوشخبری‘ بھی بتا دی، وہ کس طرح دوبارہ الیکشن لڑ سکتے ہیں؟ تفصیلات سامنے آ گئیں

اسلام آباد ( آن لائن) سپریم کورٹ آف پاکستان نے ارکان پارلیمینٹ کی نااہلی کی مدت کے تعین سے متعلق درخواستوں پر فیصلہ سناتے ہوئے کہا ہے کہ آئین کے آرٹیکل 62 ون ایف کے تحت نااہلی تاحیات ہے یعنی اس شق کے تحت نااہل ہونے والا شخص عمر بھر الیکشن نہیں لڑ سکتا۔

اس فیصلے کے بعد سابق وزیر اعظم اور حکمران جماعت کے قائد میاں محمد نواز شریف اور حزب مخالف کی جماعت پاکستان تحریک انصاف کے سیکرٹری جنرل جہانگیر ترین کی نااہلی بھی آئین کے اسی ارٹیکل کی تحت ہی ہوئی ہے جس کا مطلب ہے کہ وہ اب الیکشن نہیں لڑ سکتے لیکن اس کیساتھ ہی عدالت نے نواز شریف اور جهانگیر ترین کو ’خوشخبری‘ بھی سنا دی ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے بی بی سی کے مطابق عدالت کا کہنا تھا کہ عوام کو صادق اور امین قیادت ملنی چاہیے اور اگر ایسا نہیں ہوتا آئین میں بھی لکھا ہوا ہے کہ ایسے شخص کی نااہلی تاحیات رہے گی جبکہ فیصلے میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ جب تک جس بنیاد پر نااہلی کا فیصلہ کیا گیا ہے اگر اس فیصلے کے خلاف کوئی فیصلہ آجاتا ہے تو یہ نااہلی غیرموثر ہوجائے گی۔