’’اگر نواز شریف کی گرفتاری کا حکم آیا تو۔۔۔‘‘ وزیرا عظم نےدبنگ اعلان کردیا

اسلام آباد(ویب ڈیسک) وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ نواز شریف کو چار دفعہ ووٹ دیا، ان کو وزیر اعظم سمجھتا ہوں تاہم ان کی گرفتاری کا حکم ہوا تو گرفتار کریں گے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ نیب کے اربوں روپے فراڈ کے کیسز کی مہینے میں دو سماعتیں ہوتی ہیں، نواز شریف کے خلاف نیب کیس کی روزانہ سماعت ہوتی ہے، نیب کی عدالت میں نواز شریف کو انصاف نہیں ملے گا تاہم انصاف ہوتا نظر آنا چاہئے، عوام اور عدالتی تاریخ نواز شریف کے خلاف فیصلہ قبول نہیں کرے گی، نواز شریف اور ہم نے بہت جیلیں دیکھی ہیں۔وزیر اعظم نے کہا کہ چیئرمین سینیٹ کو نکالنے کی بات نہیں کی، سینیٹ فیڈریشن کی نمائندگی کرتا ہے اس کے وقار میں کمی ہوئی ہے، سینیٹ الیکشن میں اس دفعہ گھوڑے نہیں اصطبل بکا ہے، سینیٹ کا وقار بحال کرنے میں بہت وقت لگے گا۔

شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ سینیٹ الیکشن میں ہم نے ایک پیسہ لیا نہ دیا ہے، ایک پارٹی کے سربراہ نے کہا 14 ایم پی ایز بکے، ہمارے کسی ممبر نے ایسا کیا تو اسے سینیٹر شپ چھوڑ دینی چاہئے۔انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ یا فوج سے کوئی جھگڑا نہیں ہے، چیف جسٹس سے ملاقات میں سب کچھ مثبت تھا، کچھ لوگوں نے ملاقات کے وقت اعتراض کیا، ملاقات ملک کے مفاد میں تھی، ایسی ملاقاتیں ہونی چاہئے۔وزیر اعظم نے کہا کہ بلوچستان حکومت گرانے میں شاہ صاحب کا حصہ نہیں تھا، کچھ لوگوں کو آخری سال نیا صوبہ یاد آگیا ہے، ان لوگوں کے نام نوٹ کرلیں، دیکھیں ان کے ساتھ الیکشن میں کیا ہوتا ہے۔

شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ جس نے جانا ہے وہ جائے، ان کو اپنی سیاست مبارک ہو، ہماری پارٹی مضبوط ہے ہمیں اور امیدوار مل جائیں گے، چوہدری نثار اپنی جماعت چھوڑ کر کہاں جائیں گے؟ انہوں نے پارٹی چھوڑنی ہوتی تو چھوڑ چکے ہوتے، ناراضی میں کوئی پارٹی نہیں چھوڑتا ہے پارٹی چھوڑنا ان کا اختیار ہے۔