دشمنوں کی ہر چال کو شکست دی اور آئندہ بھی دیں گے، آرمی چیف

پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہےکہ ردالفساد صرف آپریشن نہیں ایک نظریئے کا نام ہے، پاکستان نے اپنی سرزمین سے تمام دہشت گردوں کی منظم موجودگی کا خاتمہ کردیا ہے۔
ملٹری اکیڈمی کاکول میں پی ایم اے کے 137 ویں لانگ کورس، آٹھویں مجاہد کورس اور 56 ویں انٹی گریٹڈ کورس کی پاسنگ آؤٹ پریڈ سے خطاب کرتے ہوئے آرمی چیف نے کہا کہ پاکستان نے دشمن کی ہر چال کو شکست دی اور انشاء اللہ آئندہ بھی شکست دیں گے۔ 
پاسنگ آؤٹ پریڈ میں فاٹا کے 31، بلوچستان کے 67 اور سعودی عرب کے 6 کیڈٹس بھی شامل تھے۔
آرمی چیف نے پاسنگ آؤٹ پریڈ کا معائنہ کیا اور 137 ویں پی ایم اے لانگ کورس کے اکیڈمی سینئر انڈر آفیسر سید حسنین علی کو شاندار پرفارمنس پر اعزاز شمشیر سے نوازا۔
پاکستان کو روایتی اور غیر روایتی محاذوں پر چیلنجز درپیش ہیں، سربراہ پاک فوج
ان کا کہنا تھا کہ پاس ہونے والے کمیشنڈ ایسے وقت میں پاکستان آرمی کا حصہ بن رہے ہیں جب ملک کو روایتی اور غیر روایتی دونوں محاذوں پر چیلنجز درپیش ہیں۔
انہوں نے کہا کہ موجودہ دور میں کمانڈ اور قیادت کا نظریہ سب سے زیادہ توقعات کا مطالبہ کرتا ہے کیونکہ آپریشنز کی گرمی میں آپ کے ماتحت لوگ آپ جانب دیکھ رہے ہوتے ہیں جہاں آپ کو کمانڈر سے زیادہ ایک لیڈر کا مظاہرہ کرنا پڑتا ہے۔
سربراہ پاک فوج نے کہا کہ ہمارا دشمن جانتا ہے کہ وہ ہمیں جنگی محاذ پر شکست نہیں دے سکتا اس لیے وہ ہمارے خلاف ’ہائبرڈ جنگ‘ کر رہا ہے، دشمن ہمیں اندر سے کمزرو کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔
انہوں نے کہا کہ ہم نے دشمنوں کی ہر چال کو شکست دی اور انشاء اللہ آئندہ بھی شکست دیں گے کیونکہ ہمیں قوم کی بھرپور اور مکمل حمایت حاصل ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ پاکستان ایک امن پسند ملک ہے اور تمام ہمسایہ ممالک کے ساتھ امن چاہتا ہے لیکن ہماری امن کی خواہش کو ہماری کمزوری نہ سمجھا جائے۔
ردالفساد صرف آپریشن نہیں بلکہ ایک نظریے کا نام ہے، جنرل قمر جاوید باجوہ
جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ پاکستان نے اپنی سرزمین سے منظم دہشت گردوں کا خاتمہ کر دیا ہے اور بچے ہوئے دہشت گردوں کا آپریشن ردالفساد کے ذریعے پیچھا کر رہے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ ردالفساد صرف آپریشن نہیں بلکہ ایک نظریے کا نام ہے اور آخری دہشت گرد کے خاتمے تک چین سے نہیں بیٹھیں گے۔
ان کا کہنا تھا کہ ہماری فوج ہر قسم کے خطرات کا سامنا کرنے کی بھرپور صلاحیت رکھتی ہے اور اپنی سرزمین کسی دوسرے ملک کے خلاف استعمال نہیں ہونے دیں گے۔
پاک فوج کے سربراہ نے کہا کہ پاکستان کشمیریوں کے حق خود ارادیت کی مکمل سیاسی و اخلاقی حمایت کرتا ہے اور مقبوضہ کشمیر کے امن پسند شہریوں کو ریاستی دہشت گردی کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔
انہوں نے کہا کہ یہ بین الاقوامی برادری کے لیے بہترین وقت ہے کہ وہ جاگے اور مقبوضہ کمشیر کے عوام کو امن فراہم کرنے کے لیے اپنا کردار ادا کرے۔
ان کا کہنا تھا کہ ہمار اس بات پر مکمل یقین ہے کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان کشمیر سمیت تمام تنازع بامقصد مذاکرات کے ذریعے ہی حل کیے جا سکتے ہیں، یہ مذاکرات کسی ایک فریق کے حق میں نہیں بلکہ پورے خطے میں امن کے لیے اہم ہیں۔
افغانستان میں امن کے بغیر پاکستان میں امن قائم نہیں ہو سکتا، آرمی چیف
افغانستان کے حوالے سے بات کرتے ہوئے سربراہ پاک فوج کا کہنا تھا کہ ہم ہر فورم پر افغان امن عمل میں ثالثی کا کردار ادا کرنے کے لیے تیار ہیں اور ہم اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ افغانستان میں امن کے بغیر پاکستان میں امن قائم نہیں ہو سکتا اس لیے ہمیں امن کے حصول کے لیے اپنے افغان بھائیوں کے ساتھ مل کر کام کرنا ہے۔
جنرل قمر جاوید باجوہ نے مزید کہا کہ پاکستان نے شدت پسندی اور دہشت گردی کے خاتمے کے لیے اپنے حصے کا کام کر دیا ہے اور ہماری کوششوں کے ثمرات بھی سامنے آنا شروع ہو گئے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ ہم پاکستان کو محفوظ، خوشحال اور ترقی یافتہ بنانے کے لیے ان کوششوں کو جاری رکھنے کے لیے پرعزم ہیں۔