الوداع ۔۔۔ملک مخالف بیانیے پر نواز شریف کیساتھ نہیں چل سکتا اہم ترین رہنماء نے ن لیگ کو خیر باد کہہ دیا

اسلام آباد (ویب ڈیسک) : مسلم لیگ ن کے رہنما لیفٹننٹ کرنل (ر) غلام رسول ساہی قومی اسمبلی کی نشست سے مستعفی ہو گئے۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق لیفٹننٹ کرنل (ر) غلام رسول ساہی نے مبیینہ طور پر ن لیگ کی نئی پالیسی سے اختلاف کرتے ہوئے استعفیٰ دیا ہے۔ غلام رسول ساہی نے کہا کہ میں موجود صورتحال میں ن لیگ کے ساتھ مزید نہیں چل سکتا۔

لیفٹننٹ کرنل (ر) غلام رسول ساہی 2013ء کے الیکشن میں فیصل آباد کےحلقہ این اے 75 سے رکن قومی اسمبلی منتخب ہوئے تاہم اب انہوں نے اپنی قومی اسمبلی کی نشست سے مستعفی ہونے کا اعلان کیا ہے۔یاد رہے کہ اس سے قبل بھی مسلم لیگ ن کے کئی رہنما پارٹی کو خیر باد کہہ چکے ہیں، پانامہ لیکس کیس میں پی ٹی آئی کو بڑی کامیابی حاصل ہونے کے بعد سے ہی پی ٹی آئی کی سیاسی فتوحات میں دن بدن اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔

پانامہ لیکس کیس میں نا اہل ہونے پر مسلم لیگ ن کے رہنما نواز شریف کو نہ صرف وزارت عظمیٰ سے مستعفی ہونا پڑا بلکہ انہیں پارٹی صدارت کے عہدے سے بھی ہاتھ دھونا پڑے۔ یہی وجہ ہے کہ نواز شریف نے سپریم کورٹ سے نا اہلی کے بعد عدلیہ مخالف بیانات دینا شروع کر دئے جن کی ان کے اپنے پارٹی رہنماؤں نے بھی مخالفت کی۔ نواز شریف کی عدلیہ اور ریاستی اداروں کے مخالف پالیسی کو مسترد کرتے ہوئے کئی رہنما حکومتی جماعت سے علیحدگی اختیار کر چکے ہیں تاہم اب نواز شریف کے ممبئی حملوں سے متعلق متنازعہ بیان کی وجہ سے بچے کُھچے پارٹی رہنماؤں نے بھی پارٹی چھوڑنے پر غور شروع کر دیا ہے۔

سیاسی تجزیہ کاروں کے مطابق نواز شریف کے اس بیان سے ان کی پارٹی اور آئندہ الیکشن میں ان کے ووٹ بنک کو بھاری نقصان پہنچے گا ، جبکہ کچھ اطلاعات کے مطابق نواز شریف کے اس بیان کو لے کر پارٹی میں دھڑے بندی کا آغاز بھی ہو چکا ہے۔ لیکن نواز شریف اپنے بیان پر قائم ہیں اور ان کا کہناہے کہ میں سچ کہوں گا چاہے اس کے لیے مجھے کچھ بھی سہنا پڑے۔