نیب میں پیشیاں کوئی نئی بات نہیں :حمزہ شہباز

وزیراعلیٰ پنجاب کے صاحبزادے حمزہ شہباز کا کہنا ہے کہ نیب میں پیشیاں کوئی نئی بات نہیں،جب دامن صاف ہے تو حمزہ شہباز اور عام آدمی میں کوئی فرق نہیں ہے۔
تفصیلات کے مطابق حمزہ شہباز صاف پانی کرپشن اسکینڈل میں نیب میں پیش ہوئے ،جہاں انہوں نے نیب حکام کو ڈیڑھ گھنٹہ تک سوالوں کے جوابات دیئے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ حمزہ شہباز سے تیرہ سوال کیے گئے۔
پیشی کے بعد حمزہ شہباز شریف نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ صاف پانی کمپنی بورڈ کا ممبر نہیں ہوں صرف پانچ اجلاسوں میں شرکت کی،جب دامن صاف ہے تو حمزہ شہباز اور عام آدمی میں کوئی فرق نہیں اور ہمارا دامن صاف ہے۔ہم پہلے بھی سرخرو ہوئے، اب بھی ہوں گے۔مشرف دور میں نیب نے کہا کہ ہم دس سال کھنگالتے رہے لیکن آپ کے اور آپ کے خاندان کے خلاف کوئی کیس نہیں ملا اب بھی دودھ کادودھ اورپانی کاپانی ہوناچاہئے۔
حمزہ شہباز کا مزید کہنا تھا کہ نیب میں پیشیاں ہمارے لئے کوئی نئی بات نہیں ،بےنظیربھٹو کے دور میں اٹھارہ سال کی عمر میں چھ ماہ اڈیالہ جیل میں رہ چکا ہوں، ہمار ے تو ہاتھ صاف ہیں لیکن عوام زرداری صاحب کے سوئس اکاونٹس کو نہیں بھولے۔پی ٹی آئی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ میٹروکو جنگلہ بس کہنے والے اب خود وہی کام کر رہے ہیں، لاہور میں میٹروبس بعد اب اورنج ٹرین کا افتتاح بھی کر دیا ہے لیکن پشاور میں ابھی تک دھول اڑ رہی ہے۔
واضح رہے کہ صاف پانی کی کمپنی میں کروڑوں روپے کی مالی بے ضابطگی کی گئی تھی جس کے الزام میں نیب لاہور نے چار اعلیٰ افسران ڈاکٹر ظہیر الدین، ناصر قادر بھدل، محمد سلیم اور محمد مسعود اختر کو گرفتار کیا تھا۔یاد رہے کہ صاف پانی کیس میں دو ماہ قبل چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے از خود نوٹس لے کر شہباز شریف کو عدالت میں پیش ہونے کا حکم دے دیا تھا۔ انھوں نے عدالت کو تین ہفتوں میں صاف پانی کی فراہمی اور واٹر ٹریٹمنٹ کا منصوبہ پیش کرنے کی یقین دہانی کرائی تھی۔