دنیا کے سب سے بڑے اسلامی ملک نے بھارت کے لئے ایسا کام کرنے کا فیصلہ کرلیا کہ جان کر پاکستانیوں کی حیرت کی انتہا نہ رہے گی، اب بھارتی فوج اس کے۔۔۔

نئی دلی (نیوز ڈیسک) امت مسلمہ کے اہم ملک انڈونیشیا اور ہمارے ہمسائے بھارت کے درمیاں تعلقات کچھ زیادہی خوشگوار ہوتے دکھائی دے رہے ہیں۔ انڈونیشیاءکی جانب سے بھارت کو گہرے سمندر کی بندرگاہ سابانگ تک رسائی دی جاسکتی ہے جبکہ یہ بھی ممکن ہے کہ انڈونیشیا کی بحریہ کے جہازوں تک بھی بھارت کو رسائی مل جائے۔

ٹائمز آف انڈیا کے مطابق انڈونیشیا کی وزارت بحری امور کے وزیر لوہوت پنجیاتان نے نئی دلی میں ایک خطاب کے دوران کہا کہ ”بھارت اور انڈونیشیا نے بحری مشقوں کا آغاز 2017ءمیں کیا لیکن ہم اپنے کوسٹ گارڈز کے درمیان مزید بہت کچھ کرنے کی آپشن پر غورکررہے ہیں۔ جب بھارت کے ساتھ مل کر سابانگ بندرگاہ کا قیام عمل میں آئے گا تو یہ صورتحال مزید بہتر ہوجائے گی۔ سابانگ بندرگاہ کی گہرائی 40میٹر ہے جو کہ آبدوزوں کے لئے بھی بہت اچھی ہے۔“

بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کی اگلے چند دن میں انڈونیشیا روانگی متوقع ہے جس کے دوران وہ انڈونیشیا کے صدر جوکووڈوڈو سے ملاقات کریں گے۔ انڈونیشیائی علاقہ سابانگ بھارت کے انڈمان و نکوبار جزائر سے صرف 700 کلومیٹر کی دوری پر واقع ہے۔ انڈونیشیا یہاں ناصرف بھارت کے تعاون سے گہرے سمند رکی بندرگاہ کا قیام چاہتا ہے بلکہ اس کی یہ خواہش بھی ہے کہ اس سے منسلک اکنامک زون میں بھی بھارت سرمایہ کاری کرے۔ توقع کی جارہی ہے کہ وزیراعظم نریندر مودی سابانگ تک بحری سفر کریں گے جس کا مقصد یہ ظاہر کرنا ہے کہ انڈونیشیا اور بھارت بے حد قریب ہیں۔ ان کے دورہ انڈونیشیا کے دوران دونوں ممالک کے مابین دفاعی اور خلائی شعبوں میں تعاون پر بھی بات چیت متوقع ہے۔