لاہور: اعلی افسران کی گرفت کمزور ،، یا ؟ پولیس سرپرستی میں جوئے کے اڈے ،سپیشل ٹیم کے چھاپے جواری گرفتار ،،ایس ایچ او عظیم باجوہ اور کارخاص کے جواریوں کو مفید مشور ے

لاہور(رپورٹ:ملک ظہیر )ڈی ایس پی شمالی چھاؤنی کی سپیشل ٹیم نے غازی آباد پولیس کی سرپرستی میں ہونے والے جوا کے اڈے پرچھاپہ مار کر 7 جواریوں کو گرفتار کر کے مقدمہ درج کر لیا۔بتایا گیا ہے کہ ایس ایچ او عظیم باجوہ کی سرپرستی میں طویل عرصہ سے طارق اور اسکا بھائی آصف جوا کر وارہے تھے۔ایس ایچ او کے کارخاص ٹی اے ایس آئی عاصم اور کانسٹیبل عمر نے منتھلی تاخیر سے پہنچنے پر چھاپہ مار کر ملزمان کو حراست میں لیا اور پھر بھاری رشوت لیکر انہیں رہا کر دیا ۔سابق ڈی آئی جی آپریشن لاہور نے شکایت پر دونوں اہلکاروں کو معطل کر کے کلوز ہیڈ کواٹر کر دیا اور ایس پی کینٹ کو انکوائری کا حکم دیا جو ابھی التوا کا شکار ہے بتایا گیا ہے کہ ٹی اے ایس آئی عاصم اور کانسٹیبل عمر پولیس لائن تبدیل ہونے کے باوجود ایس ایچ او سے ملکر علاقے میں جرائم کرواتے ہیں ۔بتایا گیا ہے کہ ڈی ایس پی شمالی چھاؤنی اشتیاق خان نے ایس ایچ او غازی آباد کو بار بار طارق سمیت علاقے میں جوئے کے اڈے اور منشیات فروشوں کے خلاف کارروائی کا حکم دیا لیکن اس نے جرائم پیشہ افراد کے خلاف کارروائی کی بجائے انہیں ٹھکانے تبدیل کرنے کی تجویز دیتے رہے ۔تب ڈی ایس پی نے ایس ایچ او شمالی چھاؤنی جاوید صدیق کی سرپرستی میں ایک ٹیم تشکیل دی جنہوں نے طارق کے جوا پر چھاپہ مارا تو طارق فرار ہو گیا جبکہ اسکا بھائی آصف، زوہیب, خالد وغیرہ کو جوا کھیلتے ہوئے رنگے ہاتھوں گرفتار کر کے داؤ پر لگی رقم اور اسلحہ بر آمد کر کے مقدمہ درج کر لیا