اب ہونگے انصاف کے تقاضے پورے ،،ڈی آئی جی ڈاکٹر انعام وحید نے وہ کام کر دیا جوکوئی نہ کر سکا،،،جرائم پیشہ افراد کے ساتھ کرپٹ تفتیشی افسران کو بھی جھٹکا

لاہور(رپورٹ:ملک ظہیر)ڈی آئی جی انوسٹی گیشن ڈاکٹر انعام وحید نے تفتیش کے نقائص دور کر کے اسے بہتر بنانے کے لئے بہت سے اہم اقدامات اٹھائے ہیں تا کہ تفتیشی نظام کو بین الاقوامی تقاضوں کے مطابق جدید خطوط پر استوار کیا جا سکے۔ تفصیلات کے مطابق ڈی آئی جی ڈاکٹر انعام وحید نے چارج سنبھالنے کے بعد ناقص تفتیش کی شکایات کے بعدپراسیکیوشن برانچ کی معاونت سے سال 2018 کے کیسز میں نقائص کی نشاندہی کی روشنی میں انویسٹی گیشن ونگ لاہورکے بارے میں تحقیقاتی رپورٹ کے بعد مقدمات کی تفتیش میں نقائص دور کرنے کے لئے انویسٹی گیشن کے تمام ڈویژنل ایس پیز کو ہدایات جاری کر دی ہیں۔پہلی مرحلے میں ڈویژنل ایس پیز کوتفتیشی نقائص دور کرنے کے لیے سرکل وائز انچارج انویسٹی گیشن اور تفتیشی افسران کیلئے ریفریشر کورسزکروانے کی ہدایت جبکہ دوسرے مرحلے میں انچارج انویسٹی گیشنزاور تفتیشی افسران کے لیے تفتیشی ورکشاپس کا انعقاد عمل میں لایا جائے گا۔ جس میں ریٹائرڈجسٹس صاحبان ، سیشن ججز، پولیس افسران اور اسسٹنٹ ڈسٹرکٹ پبلک پراسیکیوٹر(ADPP) لیکچرز دیں گے۔ اس حوالے سے تمام تفتیشی افسران کو مختلف جرائم کی Check-List فراہم کر دی گئی ہیں۔ تفتیشی افسران کو چالان مقررہ وقت میں پراسیکیوشن برانچ میں جمع کروانے کاٹاسک بھی دیا گیا ہے تاکہ ملزمان کو قانون کے مطابق سزائیں دلوا کر انہیں جلد از جلدان کے منطقی انجام تک پہنچایا جا سکے۔