لاہور سرچ آپریشن ،ائیرپورٹ کے قریب ہوٹل پرچھاپہ ،کالج ،یونیورسٹی کے طلبہ و طالبات رنگے ہاتھوں گرفتار ،رشوت دیکرباعزت بری ،ہوٹل انتظامیہ محفوظ،،،ایس پی شہباز الہی نے تحقیقات کا حکم دیدیا

لاہور(رپورٹ:اسد مرزا)جنوبی چھاؤنی پولیس سر چ آپریشن کے دوران ائیر پورٹ روڈ پر بدنام زمانہ ہوٹل میں چھاپہ مار کر18جوڑوں کوقابو کر کے لڑکیوں سے الگ الگ انٹر ویو کر کے ان کے پرس خالی کر کے بری کر دیااور لڑکوں کو تھانے لا کر انکے کان پکڑوا دیئے پھر انکے ورثا کو بلا کر جرمانہ کر کے حوالے کر دیا لیکن برائی کی جڑہوٹل انتظامیہ کے خلاف کوئی کارروائی نہ کی ۔ایس پی کینٹ شہباز الہی نے اس معاملے کی تحقیقات کا حکم دیدیا ہے ۔بتایا گیا ہے کہ لاہور بااثر شخص سلامت کے مختلف علاقوں میں قائم ہوٹلز میں سرعام دھندہ چلتا لیکن پولیس ان پر ہاتھ نہیں ڈالتی۔ ایس ایچ او جنوبی چھاؤنی انسپکٹر وسیم اختر کو اطلاع ملی تھی کہ بیورلی ہوٹل میں اشتہاری موجود ہیں تب پولیس نے ہوٹل پرچھاپہ مار کر کمروں سے 18جوڑوں کو حراست میں لے لیا ۔ذرائع کا کہنا ہے کہ پولیس افسر کالج ویونیورسٹی کی لڑکیوں کے ساتھ فحاشہ عوتوں سے الٹے سیدھے سوال کرتے رہے اور طالبات کے ورثا کو اطلاع دینے کی دھمکی دیکر ان سے مبینہ طور پر رقم اکٹھی کرکے انہیں وارننگ دیکر رہا کر دیا جبکہ لڑکوں کو گاڑیوں میں ڈال کر پولیس اسٹیشن لے گئے جہاں انہیں کمرے میں بند کر کے مرغا بنا دیا اور پھر انکے ورثا کو بلا کر ’’ڈیل ‘‘کے بعد ورثا کے حوالے کیا ۔ ایس ایچ او جنوبی چھاؤنی وسیم اختر نے رابطہ کرنے پر بتایا کہ ہوٹل سے سکول کالج یا یونیورسٹی کے طلبہ و طالبات کو پکڑتے ہیں تو ایس پی صاحب کو اطلاع کر کے انکے ورثا کو بلا کر حوالے کرتے ہیں تا کہ انکی بدنامی نہ ہو۔یہ امر قابل ذکر ہے کہ فحاشی کے اڈوں کے خلاف کارروائی نہیں کی جاتی ۔ایس پی کینٹ شہباز الہی نے رابطہ کرنے پر بتایا کہیہ معاملہ انکے نوٹس میں نہیں وہ اس معاملے کی تحقیقات کرواکے ذمہ داروں کے خلاف کارروائی کرینگے ۔وہ اپنے ڈویژن میں اسطرح کی سرگرمیوں کی کسی صورت اجازت نہیں دینگے ۔
ٰ