یوم انہدام جنت البقیع: سعودی حکومت کا ایک گھناؤنا فعل

پاکستان سمیت دنیا بھر میں آٹھ شوال یوم انہدام جنت البقیع کے طور پر منایا جاتا ہے، یَومم انہدام جنت البقیع سعودی حکومت کی جانب سے مدینہ منورہ میں آئمہ اہل بیت علیہ السلام کے مقامات مقدسات منہدم کرنے کے دن کو کہا جاتا ہے، اس دن کی مناسب سے دنیا بھر میں احتجاج اور ریلیاں نکال کر خاصان خدا…
جنت البقیع میں پیغمبرخدا کے اہلبیت اورآئمہ اطہار علیہ السلام کے مزارات مبارکہ کو سعودی حکومت کی جانب سے تاراج کیا گیا، بدقسمی سےانہدام جنت البقیع کا پہلا واقع 1220ھ اور دوسرا 1344ہجری کو پیش آیاخاصان خدا سے اپنی وابستگی اورعقیدت کے اظہار کیلئے دنیا بھر میں اہل ایمان کی جانب سے آٹھ شوال کو احتجاج اور ریلیاں نکالی جاتی ہیں۔اہل ایمان کا کہنا ہے کہ جنت البقیع ہمیں رسول اللہ ﷺ، ان کی آل پاک اور اصحاب باوفا کے ساتھ عقیدت اور وابستگی کے اسباب فراہم کرتا ہے لیکن گزشتہ عرصے سے اہل ایمان کی یہ جنت غم اور ملال کی عملی تصویر پیش کر رہی ہے۔یوم انہدام جنت البقیع کی مناسبت سے اہل ایمان خاصان خدا سے منسوب مقامات کی شایان شان تعمیر چاہتے ہیں تاکہ آنے والی نسلیں اپنی وابستگی اورعقیدت کا اظہار کرسکیں۔ وہ سعودی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ جنت البقیع کی ازسرنو تعمیر کو فوری طور پر یقینی بنائے اور مسلمانوں کے دلوں میں موجود خلش کا مداوا کرے۔