اسحاق ڈار کیس: برطانیہ سے کیا معاہدہ طے پایا؟ حقیقت جانیے اس خبر میں

برطانوی وزیر خارجہ جیرمی ہنٹ نے کہا ہے کہ برطانیہ سیاسی مقاصد کے لئے استعمال ہونے والی سیاسی حوالگی کا کوئی معاہدہ نہیں کرے گا۔ برطانیہ پاکستان کے ساتھ بے دخلی کا کوئی ایسا معاہدہ نہیں کرے گا جو سیاسی مقاصد کےلئے استعمال ہو۔دوسری جانب شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ حوالگی معاہدے کو غلط استعمال نہیں کیا جائےگا…
پاکستان کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی فارن اینڈ کامن ویلتھ آفس میں برطانوی ہم منصب جیرمی ہنٹ سے ملاقات ہوئی جس کے بعد میڈ یا بریفنگ دیتے ہوئے برطانوی وزیر خارجہ جیرمی ہنٹ کا کہنا تھا کہ پاکستان اور برطانیہ کے درمیان بہت اچھے تجارتی و سفارتی تعلقات قائم ہیں۔ برطانوی سیکرٹری آف سٹیٹ فار انٹرنیشنل ٹریڈ کی طرف سے پاکستان کے ساتھ دوطرفہ تجارت کا حجم چار ملین سے ایک بلین کردی گئی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ برٹش ائیر ویز نے اپنی سروس اسلام آباد کے لئے شروع کی ہے وہ بھی دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو مزید مضبوط کرے گا، ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اور برطانیہ آپس میں دیرینہ دوست ہیں۔
برطانوی وزیر خارجہ جیرمی ہنٹ کا کہنا ہے کہ پاکستان حکومت کی طرف سے کرپشن، منی لانڈرنگ اور دہشت گردی کےخلاف کوششیں خوش آئند ہیں جبکہ پاکستان حکومت تسلیم کرتی ہے کہ پاکستان کی ترقی کا راستہ کرپشن اور بدعنوانی کے خاتمے میں ہے۔ اس موقع پر شاہ محمود قریشی نے اپنے ہم منصب جیرمی ہنٹ کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ پلوامہ حملے کے بعد برطانیہ نے دونوں ممالک کے درمیان پیدا ہونے والی کشیدگی کو کم کرنے کے لئے اہم اقدامات کئے۔
شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ برطانیہ نے یقین دہانی کروائی ہے کہ وہ پاکستان کو ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نکلنے میں مدد کرےگا۔ شاہ محمود قریشی کاکہنا تھا کہ ہماری ملاقات میں ریجنل ایشوز پر گفتگو ہوئی کہ ساری صورتحال میں پاکستان کہاں کھڑا ہے۔ جس میٍں افغان امن پروسس شامل ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ دونوں ممالک کے درمیان دو طرفہ تجارت کے بے پناہ مواقع موجود ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ بڑی تعداد میں پاکستانی دوممالک کے درمیان تعلق اور تجارت کو جوڑے رکھنے میں اہم کردار ادا کررہے ہیں۔