وزیراعظم عمران کا سعودی ولی عہد سے ٹیلیفونک رابطہ، مقبوضہ کشمیر میں بھارتی اقدام پر تبادلہ خیال

وزیراعظم عمران خان نے سعودی ولی عہد محمد بن سلمان سے ٹیلیفونک رابطہ کرکے مقبوضہ وادی میں بھارتی اقدام سے پیدا ہونے والی صورت حال پر گفتگو کی اور بھارتی ظلم وبربریت سے بھی آگاہ کیا۔
تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے سعودی ولی عہد محمد بن سلمان سے ٹیلیفونک رابطے میں کشمیر کی صورتحال پر گفتگو کی۔
وزیراعظم نے سعودی ولی عہد مقبوضہ کشمیر میں حالیہ بھارتی اقدام سے پیدا ہونے والی صورتحال اور بھارتی ظلم وبربریت سے آگاہ کیا۔
سعودی پریس ایجنسی کے مطابق دونوں رہنماؤں میں خطے کی موجودہ صورتحال پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔
یاد رہے 5 اگست کو وزیراعظم عمران خان نے ملیشین ہم منصب مہاتیر محمد سے کرکے کشمیر کی صورتحال پر تفصیلی گفتگو کی تھی۔
وزیراعظم نے کہا تھا کشمیرکی خصوصی حیثیت ختم کرناعالمی قوانین کی خلاف ورزی ہے ، بھارت کی غیرقانونی حرکت خطےکا امن برباد کرے گی، موجودہ حالات میں ہمسایہ ممالک کے تعلقات مزید کشیدہ ہوں گے۔
مہاتیرمحمد کا کہنا تھا کہ ملیشیا موجودہ صورتحال پرمکمل نظر رکھے ہوئے ہے اور صور تحال کے تناظر میں مکمل رابطے میں رہے گا۔
اسی دن وزیر اعظم عمران خان نے ترک صدر رجب طیب اردوان سے بھی رابطہ کیا اور دونوں رہنماؤں نے مقبوضہ کشمیر کی موجودہ صورت حال اور بھارتی جارحیت پر تبادلہ خیال کیا۔
اس موقع پر وزیر اعظم عمران خان نے کہا تھا کہ کشمیرکی خصوصی حیثیت ختم کرنا خطے کے امن پر اثر انداز ہوگی، پاکستان کشمیریوں کی سفارتی اور اخلاقی حمایت جاری رکھےگا۔
ترک صدر رجب طیب اردوان نے کشمیرکی موجودہ صورت حال پراظہار تشویش کرتے ہوئے پاکستان کو ہر ممکن تعاون کی یقین دہانی کرائی تھی۔
واضح رہے بھارتی پارلیمنٹ کے اجلاس میں بھارتی وزیرداخلہ نے آرٹیکل370 ختم کرنے کا بل پیش کیا تھا اور تجویز کے تحت غیر مقامی افراد مقبوضہ کشمیر میں سرکاری نوکریاں حاصل کرسکیں گے۔
بعد ازاں بھارتی صدر نے آرٹیکل 370 ختم کرنے کے بل پر دستخط کر دیے اور گورنر کا عہدہ ختم کرکے اختیارات کونسل آف منسٹرز کو دے دیئے، جس کے بعد مقبوضہ کشمیرکی خصوصی حیثیت ختم ہوگئی تھی۔