حقیقی تبدیلی آنے لگی، کیسز کا فیصلہ 2 سال میں کرنے کا قانون بہت جلد لاگو

معاون خصوصی اطلاعات و نشریات فردوس عاشق اعوان کہتی ہیں حقیقی تبدیلی، حکومت کے مثبت اقدام ہیں، عدالتی عمل کو جدید ٹیکنالوجی سے منسلک کیا جارہا ہے۔ فوری انصاف عمران خان کا مشن اور بنیادی نظریہ ہے۔ کیسز کا فیصلہ دو سال میں کرنے کاقانون لاگو کیا جا رہا ہے، پہلے مقدمات کا فیصلہ تیسری نسل تک پہنچ کر ہوتا…
سوشل میڈیا سائٹ ٹویٹر پر اپنے پیغام میں معاون خصوصی نے لکھا وزیراعظم عمران خان نے اپنی حکومت کے کندھوں پر ان بے گناہ اور معمولی جرائم میں ملوث قیدیوں کا بوجھ اٹھا لیا ہے، کئی دہائیوں سے پاکستانی جیلوں میں قید خصوصا خواتین بچے اور دیگر مستحق ،نادار قیدی جو قانونی امداد کی سہولت دستیاب نہ ہونے کی وجہ سے اپنے مقدمات کی پیروی سے قاصر تھےاس اتھارٹی کے قیام سے سے انہیں فوری انصاف کی فراہمی کا خواب حقیقت میں بدل جائے گا،سمن کے اجراء وصولی اور عدالتی حاضری سے لے کر شہادتیں ریکارڈکے عمل کو جدید ٹیکنالوجی سے منسلک کیا جا رہا ہے۔

The Legal Aid and Justice Authority Billوزیراعظم عمران خان نے اپنی حکومت کے کندھوں پر ان بے گناہ اور معمولی جرائم میں ملوث قیدیوں کا بوجھ اٹھا لیا ہے۔اس اتھارٹی کے قیام سے سے انہیں فوری انصاف کی فراہمی کا خواب حقیقت میں بدل جائے گا۔
— Firdous Ashiq Awan (@Dr_FirdousPTI) September 15, 2019
سستے اور فوری انصاف کی فراہمی پاکستان تحریک انصاف کا بنیادی نظریہ اور وزیراعظم عمران خان کا مشن ہے۔ سول کورٹ سے لے کر سپریم کورٹ تک دیوانی مقدمات کا فیصلہ دو سال تک کرنے کی قانونی شرط لاگو کی جارہی ہے۔ 

The Legal Aid and Justice Authority Billکئی دہائیوں سے پاکستانی جیلوں میں قید خصوصا خواتین بچے اور دیگر مستحق ،نادار قیدی جو Legal Aid کی سہولت دستیاب نہ ہونے کی وجہ سے اپنے مقدمات کی پیروی سے قاصر تھے.
— Firdous Ashiq Awan (@Dr_FirdousPTI) September 15, 2019