پاکستان کی معیشت چلی ہے کس جانب؟ تاجروں نے ایف بی آر کے سامنے مطالبات رکھ دیئے

مر کزی تنظیم تاجران پاکستان نے فیڈرل بورڈ آف ریونیو کو مطالبات تسلیم کرنے کیلئے 3دن کی مہلت دیتے ہوئے اعلان کیا ہے کہ 3دن میں جائز مطالبات تسلیم نہ ہونے کی صورت میں ملک بھر کی تاجر برادری شٹر ڈاؤن اور پہیہ جام ہڑتال کر نے پر مجبور ہو جائیگی۔
مر کزی تنظیم تاجران پاکستان کے زیر اہتمام گزشتہ روز اسلام آباد میں نئے ٹیکسز اور معاشی پالیسیوں کے خلاف ملک گیر کنونشن ہوا جس میں ملک بھر سے آئے ہوئے تا جر رہنماؤں نے حکومت اور ایف بی آر کی معاشی پالیسیوں پر زبر دست تنقید کی، بعد ازاں مرکزی تنظیم تاجران پاکستان کے صدر محمد کاشف چوہدری اور چیئر مین خواجہ سلیمان صدیقی، سید عبدالقیوم آغا کی قیادت میں میلوڈی سے ایف بی آر کی طرف تحفظ معیشت مارچ کیا گیا جسے انتظامیہ نے نادرہ چوک پر روک دیا جہاں پر تاجروں نے دھر نا دیا۔اس موقع پر ایف بی آر کے اعلیٰ حکام نے تاجر رہنماؤں سے مذاکرات کیے۔
ایف بی آر کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے محمد کاشف چوہدری نے کہا ہم ایف بی آر کو 3دن کا ٹائم دے رہے ہیں اگر ہمارے جائز مطالبات تسلیم نہ کیے گئے تو ملک بھر کی تاجر برادری شٹر ڈاؤن اور پہیہ جام ہڑتال کرنے پر مجبور ہو جائے گی۔